Ek Makda Aur Makhi (A spider and a fly)

Urdu - Allama Iqbal
ایک مکڑا اور مکھی  

اک دن کسی مکھی سے یہ کہنے لگا مکڑا

اس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمہارا

لیکن مری کٹیا کی نہ جاگی کبھی قسمت

بھولے سے کبھی تم نے یہاں پاؤں نہ رکھا

غیروں سے نہ ملیے تو کوئی بات نہیں ہے

اپنوں سے مگر چاہیے یوں کھنچ کے نہ رہنا

آؤ جو مرے گھر میں تو عزت ہے یہ میری

وہ سامنے سیڑھی ہے جو منظور ہو آنا

مکھی نے سنی بات جو مکڑے کی تو بولی

حضرت کسی نادان کو دیجے گا یہ دھوکا

اس جال میں مکھی کبھی آنے کی نہیں ہے

جو آپ کی سیڑھی پہ چڑھا پھر نہیں اترا

مکڑے نے کہا واہ فریبی مجھے سمجھے

تم سا کوئی نادان زمانے میں نہ ہوگا

منظور تمہاری مجھے خاطر تھی وگرنہ

کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس میں نہیں تھا

اڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے

ٹھہرو جو مرے گھر میں تو ہے اس میں برا کیا

اس گھر میں کئی تم کو دکھانے کی ہیں چیزیں

باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی یہ کٹیا

لٹکے ہوئے دروازوں پہ باریک ہیں پردے

دیواروں کو آئینوں سے ہے میں نے سجایا

مہمانوں کے آرام کو حاضر ہیں بچھونے

ہر شخص کو ساماں یہ میسر نہیں ہوتا

مکھی نے کہا خیر یہ سب ٹھیک ہے لیکن

میں آپ کے گھر آؤں یہ امید نہ رکھنا

ان نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے

سو جائے کوئی ان پہ تو پھر اٹھ نہیں سکتا

مکڑے نے کہا دل میں سنی بات جو اس کی

پھانسوں اسے کس طرح یہ کم بخت ہے دانا

سو کام خوشامد سے نکلتے ہیں جہاں میں

دیکھو جسے دنیا میں خوشامد کا ہے بندا

یہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی

اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رتبہ

ہوتی ہے اسے آپ کی صورت سے محبت

ہو جس نے کبھی ایک نظر آپ کو دیکھا

آنکھیں ہیں کہ ہیرے کی چمکتی ہوئی کنیاں

سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجایا

یہ حسن یہ پوشاک یہ خوبی یہ صفائی

پھر اس پہ قیامت ہے یہ اڑتے ہوئے گانا

مکھی نے سنی جب یہ خوشامد تو پسيجي

بولی کہ نہیں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا

انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا میں

سچ یہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہیں ہوتا

یہ بات کہی اور اڑی اپنی جگہ سے

پاس آئی تو مکڑے نے اچھل کر اسے پکڑا

بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی

آرام سے گھر بیٹھ کے مکھی کو اڑایا

 

MAKRA OR MAKHI
“SPIDER & THE FLY”
Translation by Allama lqbal for children (Original Poem by Mary Howitt)

(In Roman script)

Ek din kisi makhi se yeh kehnay laga mkra.
Iss rah se hota hai guzar roz tumhara.
Lekin meri kutia ki na jagi kabhi kismat .
Bholay se kabhi tum ne yahan paon na rakha.
Gairon se na miliay to koi baat nahin hai.
Apno se magar chahiyay yon khinch ke na rehna.
Aao jo meray ghar mein to izzat hai ye meri
Woh samnay seerhi hai jo manzoor ho aana.
Makhi ne suni baat jo makray ki to boli.
Hazrat kisi naadan ko dejay ga ye dhoka.
Iss jaal mein makhi kabhi aanay ki nahi hai.
Jo aap ki seerhi pe charha phir nahin utra.
……………
Makray ne kaha”Wah farebi mujhay samjhi!
Tum sa koi nadan zamanay mein na hoga.
Manzur tumhari
mujhay khatir thhi vagarna.
Kuchh faida apna to mera iss mein nahi thha.
Urti hui aayi ho Khuda janey kahan se.
Tehro jo meray ghar mein to hai iss mein bura kya
Iss ghar mein kai tum ko dikhanay ki hein cheezen
Bahar se nazar aati hai ye chhoti
Si kutya.
Latkay huay darwazon pe bareek hein parday
Deewaron ko hai aainon se mein ne sajaya.
Mehmano ke
aaram ko hazir hein bichhonay
Har shakhs ko saman ye mayassar nahin hota.
Makhmal ke jo takiay hein to resham ka bichhona
Aaram se tum in pe yahan raat ko sona.
Makhi ne kaha kher ye sab theek hai lekin.
Mein aap ke ghar aaon ye umeed na rakhna.
In narm bichhono se Khuda mujh ko bachaye
So jaye koi in pe to phir utth nahin sakta.”
Makray ne kaha dil mein suni baat jo ous ki
Phanson isay kis tarah ye kumbakht hai dana
Sau (100)kaam khushamad se nikaltay hein jahan mein
Dheko jisay duniyan mein khushamad ka hai banda.
Ye soch ke makhi se kaha uss ne “Bari bi.
Allah ne bakhsha hai bara aap ko rutba.
Hoti hai barhi aap ki surat se mohabbat.
Ho jis ne kabhi ek nazar aap ko dekha.
Ankhein hein ke heeray ki chamakti hui kanyan
Sar aap ka Allah ne kalghi se sajaya.
Ye husn, ye poshak, ye khubi ye safai.
Phir iss pe qayamat hai ye urtay huay gana”
Makhi ne suni jab ye khushmad to paseeji.
Boli ke nahin aap se mujh ko koi khatka.
Inkaar ki aadat ko samajhti hun bura mein.
Such hai ye ke dil torna achha nahin hota.
Ye baat kahi aur urri apni jagah se
Pass ayi to mukray ne uchhal ke usay pakra.
Bhuka thha kai roz se ab haath jo ayee.
Aaram se ghar beth ke mukhi ko uraya.